اردوئے معلیٰ

ہوا ، صحرا ، سمندر اور پانی ، زندگانی

کسی بچھڑے ہوئے کی ہے نشانی ، زندگانی

 

کوئی موسم ، کوئی لمحہ ، کسی کا سُرخ آنچل

مجھے اچھی لگی تیری کہانی ، زندگانی

 

تمہارے چھوڑ جانے پر ہوئے ہیں طنز ایسے

سنو آ کر کبھی میری زبانی ، زندگانی

 

اُسے کیسے بتاؤں کس طرح میں نے بسر کی

پڑی تنہا مجھے خود ہی نبھانی ، زندگانی

 

نئے ہیں زینؔ رستے پر کہاں وہ جاز بیت

ہمیں تو راس تھی برسوں پرانی ، زندگانی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات