اردوئے معلیٰ

Search

ہو جائے گی ہر شوکتِ شاہانہ سبوتاژ

پر ہو گا مِرے شاہ کا منگتا نہ سبوتاژ

 

دیوانۂِ دل ، سر سوئے روضہ کرے ساجد

یارب ! نہ ہو یہ جذبۂِ مستانہ سبوتاژ

 

اے مظہرِ توحید ! ہر اک دور میں تجھ سے

کعبہ ہوا آباد ، صنم خانہ سبوتاژ

 

حاصل ہیں جو نعتِ گلِ طیبہ کی بہاریں

ایماں کا گلستاں کبھی ہوگا نہ سبوتاژ

 

اُٹّھے ہیں اگر ہاتھ تِرے یادِ نبی سے

ہے زاہد ناداں ! تِری دوگانہ سبوتاژ

 

یہ حصرِ "رَفَعنا ” میں ہے وہ حکمِ فنا میں

مدحت کدہ آباد غزل خانہ سبوتاژ

 

انسان کو انسانی روش تو نے بتائی

اور کر دیے اطوارِ بہیمانہ سبوتاژ

 

بیمارو ! چلو بر درِ عیسائے مدینہ

تاحشر نہ ہو گا یہ شفا خانہ سبوتاژ

 

بجھنے کو نجوم و مہ و خور ہیں اے معظم !

ہو گی نہ مگر طلعتِ جانانہ سبوتاژ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ