اردوئے معلیٰ

Search

ہے راحتِ جاں فرحِ جگر گنبدِ خضریٰ

ہر وقت رہے پیشِ نظر گنبدِ خضریٰ

 

لاریب ہو سرسبز مری شاخِ تمنا

دیکھوں جو میں ہر شام و سحر گنبدِ خضریٰ

 

ہر اوج کا رفعت کا بلندی کا علو کا

جھکتا ہے ترے سامنے سر، گنبد خضریٰ

 

بس میری نگاہوں میں ترا عکسِ حسیں ہو

اس درجہ مرے دل میں اتر گنبدِ خضریٰ

 

پرکیف جو رہتی ہیں مرے دل کی فضائیں

ہے تیری محبت کا اثر گنبد خضریٰ

 

دن رات، بڑھانے کے لیے اپنی ضیائیں

تکتے ہیں تجھے شمس و قمر، گنبد خضریٰ

 

تقدیر کے ماروں کو عطا کرنا اجالے

ہے تیری ادا ، تیرا ہنر گنبد خضریٰ

 

ہیں ساری مرادوں کا خلاصہ شہہ بطحا

ہے ساری دعاؤں کا ثمر گنبدِ خضریٰ

 

سرکارِ مدینہ کی عنایات کے صدقے

ہے مسکنِ صدیق و عمر گنبدِ خضریٰ

 

واللہ یہ ہم رتبۂ فردوس نہ ہوتی

دھرتی پہ نہیں ہوتا اگر گنبد خضریٰ

 

خوابوں کا خیالوں کا تمنائے صدف کا

ہے تیری طرف روئے سفر گنبدِ خضریٰ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ