اردوئے معلیٰ

ہے وہی کنجِ قفس اوروہی بے بال وپری

 

ہے وہی کنجِ قفس اور وہی بے بال وپری

وہی مَیں اور تمنّا کی وہی بے اثری

 

لب ملے ہیں سو شب و روز ہیں فریاد کناں

آنکھ پائی ہے سو ہے وقفِ پریشاں نظری

 

کس سے کیجیے خلشِ سوزشِ پنہاں کا بیاں

کون سنتا ہے یہاں قصۂِ شوریدہ سری

 

السّلام اے شہِ جنّ و ملک و حور و بشر

جس کے قامت پہ کُھلا حُسنِ لباسِ بشری

 

جِس کے نقشِ کف پا دامنِ صحرا پہ گُلاب

فیض سے جن کے ہو تپتی ہوئی مٹی بھی ہری

 

کُوبکو جس کی ضیا مہرِ درخشاں کی طرح

چار سُو جِس کی عطا مثلِ نسیم سحری

 

جِس کے گھر میں نہیں مِلتے زر و گوہر ، وہ غنی

ہاتھ میں جس کے نہ شمشیر نہ خنجر، وہ جری

 

تیرے اوصاف کہاں اور کہاں میری زباں

طاقتِ و صف سے بالا تری والا گُہری

 

بہ حسب صاحبِ اسراء و براق و معراج

بَہ نسب مطّلبّی و قرشیّ و مُضری

 

فیض نے تیرے تراشے ہیں جواہر کیا کیا

زور و فقرِ علویؓ ، عدل و جلالِ عُمریؓ

 

کجکلاہوں کو مبارک ہوسِ مال و منال

اس گدا کو ترے دروازے کی دریوزہ گری

 

تُو جو چاہے تو بنے مخزنِ انوارِ صفا

یہی جھولی کہ جو اب تک ہے گناہوں سے بھری

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ