یار ! تُو میرے درد کو میری سخن وری نہ جان

یار ! تُو میرے درد کو میری سخن وری نہ جان

چیخ کو شعر مت سمجھ، آہ کو شاعری نہ جان

 

سطح پہ تو سکون ھے، تہہ میں بڑا جنون ھے

جھیل کی خامشی کو تُو جھیل کی خامشی نہ جان

 

تُو مرا پہلا عشق تھا، تُو مرا پہلا عشق ھے

بات تو ٹھیک ھے مگر پہلے کو آخری نہ جان

 

شوق ھو چاھے دید ھو، جو بھی ھو، بس شدید ھو

دیکھ تو سرسری نہ دیکھ، جان تو سرسری نہ جان

 

اِتنا نہ خود فریب بن، ایسے نہ خود سے جھوٹ بول

عشقِ زیاں نصیب کو حاصلِ زندگی نہ جان

 

جسم کے آر پار دیکھ، روح کا شاھکار دیکھ

عام سے آدمی کو بھی عام سا آدمی نہ جان

 

بے خَبَری کی رکھ خبر، کم نَظَری پہ کر نظر

اُس بُتِ بے نیاز کے ظُلم کو دائمی نہ جان

 

یار ھے کوئی اور شَے، سو مرے فارسا ! اُسے

چاند نہ کہہ، صبا نہ بول، پھول نہ لکھ، پری نہ جان

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ