اردوئے معلیٰ

Search

الفت حبیبِ پاک کی دل میں بسائیں گے

در پر یقین ہے ہمیں آقا بلائیں گے

 

ہم ہیں غلام اُن کے جو جانیں دلوں کا حال

اب حالِ دل کسی کو نہ اپنا سنائیں گے”

 

بخشش بجز شفاعتِ خیر البشر ملے نہ شیخ

کوثر کا جام بھی وہاں آقا پلائیں گے

 

قربِ حبیبِ پاک میں مل جائے گا سکون

رنج و الم زمانے کے سب بھول جائیں گے

 

نظریں جما کے گنبد خضریٰ پہ وارثیؔ

گنبد کو دیکھنے کی بھی حسرت مٹائیں گے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ