اردوئے معلیٰ

Search

آپ کا حُسنِ تصور لطف فرماتا رہا

میں مدینے کی طرف آتا رہا جاتا رہا

 

اِس طرف پڑھتا رہا میں جھوم کر نعتِ رسول

اُس طرف دریائے رحمت جوش میں آتا رہا

 

لوگ تیری راہ میں کانٹے بچھاتے ہی رہے

پھر بھی تُو لطف و کرم کے پھول برساتا رہا

 

آستانے سے ترے ملتی ہے راہِ مستقیم

تیرے در سے جو بھی بھٹکا ٹھوکریں کھاتا رہا

 

چلتے چلتے رُک گئی تھیں دو جہاں کی گردشیں

پر بُراقِ مصطفیٰ پرواز فرماتا رہا

 

پرچمِ لطفِ نبی تھا دم بدم سایہ فگن

ہر تلاطم یوں مری کشتی سے کتراتا رہا

 

دو جہاں کا بادشہ اور بوریے پہ بیٹھ کر

عرش کی باتیں زمیں والوں کو بتلاتا رہا

 

سُوئے یثرب کاروانِ شوق جاتا دیکھ کر

دیر تک اشکِ جلیؔ پلکوں پہ تھراتا رہا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ