اردوئے معلیٰ

Search

اپنے قلم کو ذات کا درباں کیے ہوۓ

لکھتا ہوں عشق درد کا ساماں کیے ہوۓ

 

پہلے تو ڈھونڈتا تھا میں مضمونِ شاعری

اب لکھ رہا ہوں خود کو ہی عنواں کیے ہوۓ

 

"​لکھا ہے لفظِ عشق کا معنی "​عجیب تر

عاشق پڑھیں انگشت بدنداں کیے ہوۓ

 

مرہم لگا رہا ہوں میں کاغذ کو دوستو

اور زخمِ دل کے سر پے نمکداں کیے ہوۓ

 

بھڑکا نہ دے چراغ سے آتش وہ باغ میں

کاغذ جلا رہا ہوں چراغاں کیے ہوۓ

 

اچھی لگی ہے لفظِ ندامت پہ گفتگو

مدت ہوئی کسی کو پشیماں کیے ہوۓ

 

دستورِ رہزنی سے ھیں عاشق کنارہ کش

ہوں گرچہ بند دل میں وہ طوفاں کیے ہوۓ

 

شورش مرے قلم کی ھے جرمِ زباں نہیں

پڑھتا ہے رازِ دل کو وہ قرآں کیے ہوۓ

 

اسعد ،اسد، کے شعر سے سبقت نہ لے سکا

لیکن غزل ہے نورِ گلستاں کیے ہوۓ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ