اردوئے معلیٰ

Search

بس لا تعلقی کی فضا درمیاں نہ ہو

نا مہرباں سہی تو اگر مہرباں نہ ہو

 

تو شکوۂ جفا سے مرے سرگراں نہ ہو

اب جی میں طے کیا ہے کہ منہ میں زباں نہ ہو

 

لوحِ جبیں اٹھائے رکھوں سر پہ کس لیے

سر تن پہ کیوں رکھوں جو ترا آستاں نہ ہو

 

حرص و ہوس کی راہ میں اف کارواں چلا

منزل کسے خبر ہے کہاں ہو کہاں نہ ہو

 

ملتا نہیں سراغ تری یاد کا ہمیں

چمٹی ہوئی ہی دل سے جو یادِ بتاں نہ ہو

 

اظہارِ غم کے واسطے آنکھیں ہی کیا ہیں کم

آزادیِ زبان و بیان و فغاں نہ ہو

 

جو دل میں رہ گئی تری حسرت نہ ہو کہیں

لب تک نہ آئی جو وہ تری داستاں نہ ہو

 

آتا نہیں ہے بزمِ سخن میں کوئی مزہ

جب تک نظرؔ تمہیں سا کوئی خوش بیاں نہ ہو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ