اردوئے معلیٰ

Search

بہ شکلِ دل ہی تمہیں دل کی جستجو کیا ہے

اسی جگہ پہ یہ دیکھیں لہو لہو کیا ہے

 

خدا کی ذات پہ یہ بحث و گفتگو کیا ہے

سمجھ لے اپنی حقیقت کو پہلے تُو کیا ہے

 

گہر بنا ہے چمکتا ہوا یہ خونِ صدف

نہیں تو قطرۂ نیساں کی آبرو کیا ہے

 

ہزار عالمِ رنگیں ہیں دل کی دنیا میں

مری نگاہ میں دنیائے رنگ و بو کیا ہے

 

جو دسترس میں ہو پی جاؤں میں تو خُم کا خُم

کہ مجھ کو بادۂ یک ساغر و سبو کیا ہے

 

تمام نظم ہو زیر و زبر، ہو امن تباہ

ہر اک یہی جو کہے دوسرے کو تُو کیا ہے

 

پتہ چلے کہ مقابل وہ کس کے آیا ہے

نظرؔ کے سامنے آئے سہی عدو کیا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ