اردوئے معلیٰ

Search

تاریک دیاروں میں اُجالے کا پتہ ہیں

ہم لوگ محبت ہیں، مروت کی ادا ہیں

 

مٹِتا ہوا اک نقش ہیں ہم لوحِ جہاں پر

بجھتے ہوئے خاموش ستاروں کی ضیا ہیں

 

ہم دستِ محبت میں علمدارِ مساوات

ہم دُور سے آتی ہوئی مانوس صدا ہیں

 

ہم نطقِ محبت میں ہیں الفاظِ پذیرائی

ہم چشمِ اخوت میں عنایت کی نگاہیں

 

ہر اک کو لگاتے ہیں گلے نام پر اُس کے

سینہ بھی کشادہ ہے تو بازو بہی یہ وا ہیں

 

خوشبو کی طرح پھیلے ہیں ہم راہ گزر پر

تاریکیِ شب تار میں جگنو کی ضیا ہیں

 

تاراجِ محبت ہیں اٹھائے ہوئے کشکول

آوارۂ دنیا نہیں الفت کے گدا ہیں

 

جھُلسے ہوئے منظر میں ہیں سائے کی نشانی

گرتی ہوئی دیوارِ روایت کا پتہ ہیں

 

ہم کفر سمجھتے ہیں حقارت کی نظر کو

نفرت کی زمینوں میں عنایت کی فضا ہیں

 

کھُل جائے گا اک بابِ اثر دل میں تمہارے

مانگو تو سہی ہم کو ہمی حرفِ دعا ہیں

 

بجھتے ہیں گھڑی بھر کو جل اُٹھنے کے لئے پھر

ہم لوگ ہواؤں کے نشیمن میں دیا ہیں

 

آ جائے نہ تیشے میں کہیں ضربتِ ایمان

اِس خوف میں اب امّتِ آزر کے خدا ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ