اردوئے معلیٰ

Search

توفیق ہو اے کاش بہم اور زیادہ

توصیفِ محمد ہو رقم اور زیادہ

 

یا رب ہو ترا مجھ پہ کرم اور زیادہ

دے عشقِ شہنشاہِ امم اور زیادہ

 

کرتے ہیں ترا ذکر جو ہم اور زیادہ

ہو جاتی ہے کم تلخی غم اور زیادہ

 

یاد آئے مجھے شاہِ حرم اور زیادہ

بڑھ اے خلشِ تیرِ ستم اور زیادہ

 

ممدوحِ خداوندِ جہاں ہے شہِ والا

کس کا ہے بھلا حسنِ شیم اور زیادہ

 

دیکھا نہیں شاید ابھی بُستانِ مدینہ

اترائے نہ گلزارِ ارم اور زیادہ

 

بس ختم ہے سب جاہ و حشم ختمِ رسل پر

دیکھا نہ سنا جاہ و حشم اور زیادہ

 

ہے دل میں نہاں آرزوئے دیدِ مدینہ

دل کھچنے لگا سوئے حرم اور زیادہ

 

سب آبلہ پا کہتے ہیں یہ جادۂ حق میں

ملتے ہیں ترے نقشِ قدم اور زیادہ

 

کر روضۂ انور کی زیارت سے مشرف

ڈسنے لگی اب تو شبِ غم اور زیادہ

 

عاصی ہے نظرؔ روزِ جزا اس پہ توجہ

اے صاحبِ الطاف و کرم اور زیادہ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ