جامعِ اوصاف ہے جو حسن کی تصویر ہے

جامعِ اوصاف ہے جو حسن کی تصویر ہے

وہ نبیؐ مجھ کو ملا ہے یہ مِری تقدیر ہے

 

کیا ہے زورِ حیدریؓ کیا قوت شبیرؓ ہے

زورِ بازوئے محمدؐ ہی کی اک تعبیر ہے

 

تزکیہ اخلاق کا، افکار کی تطہیر ہے

ہر طرح تذکیر ہے، تنذیر ہے، تبشیر ہے

 

کس طرح سنورے بشر غوطہ زنِ تدبیر ہے

وہ کہ ہے معمارِ انساں فکرِ ہر تعمیر ہے

 

وہ رفیعُ الذِّکر ہے از فضلِ ربِّ ذوالجلال

فرش سے تا عرش اس کے نام کی تکبیر ہے

 

صورتِ انور خوشا دیباچۂ اُمّ الکتاب

سیرتِ اطہر کتاب اللہ کی تفسیر ہے

 

ذی وجاہت، ذی حشم، ذی جاہ و عالی مرتبت

وہ امام الانبیا ہے، صاحبِ توقیر ہے

 

وہ ہے محبوبِ خدا بھی، وہ شہِ لولاک بھی

کائنات اس کی ہے سب اس کے لیے تسخیر ہے

 

معتکف ہو کر بہ قرآں چنتے رہیے دُرِّ ناب

بخششِ شاہِ ہدیٰؐ ہے مفت کی جاگیر ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

مجھے چاہیے مرے مصطفیٰ ترا پیار، پیار کے شہر کا
معطیِ مطلب تمہارا ہر اِشارہ ہو گیا
نگاہِ لطف کے اُمیدوار ہم بھی ہیں
مدحتِ مصطفیٰ گنگنانے کے بعد
یہ جُود و کرم آپؐ کا ہے، فیض و عطا ہے
ہم درِ مصطفیؐ پہ جائیں گے
مرے گھر کا جو دروازہ کھلا ہے
فراق و ہجر کا دورانیہ ہو مختصر، آقاؐ
آتی ہے رات دن اک آواز یہ حرم سے
اک نور سے مطلعِ انوار مدینہ