اردوئے معلیٰ

Search

جسم سے روح کا جدا ہونا

کتنا آساں ہے بے وفا ہونا

 

گُر نہ آیا مجھے منانے کا

اُس نے سیکھا فقط خفا ہونا

 

کوئی ذرّہ کہیں نہ رہ جائے

تم ذرا ٹھیک سے جدا ہونا

 

مشق جاری ہے غلط ہونے کی

سیکھ جائیں گے ہم بجا ہونا

 

اچھے اچھوں کا فیض پایا ہے

ہم کو اچھا لگا بُرا ہونا

 

آفتِ دل بھی روح پرور ہے

تم کبھی صبر آزما ہونا

 

حوصلے کا پہاڑ ہوتا ہے

چند لمحوں کا آسرا ہونا

 

آج شاید تری سُنی جائے

آج تم محوِ التجا ہونا

 

بس خلاصی ہے ایک ہونے میں

مار دیتا ہے دوسرا ہونا

 

لوگ نظریں جمائے رکھتے ہیں

کیا مصیبت ہے دلربا ہونا

 

زینؔ، ہے گیت گنگنانا بھی

اُس کا ہونٹوں سے بس ادا ہونا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ