اردوئے معلیٰ

Search

جس سمت دو جہاں میں رشکِ قمر گیا

اس سمت عاصیوں کا مقدر سنور گیا

 

رمضان پاک ہم کو ملا آپ کے طفیل

جھولی گناہ گاروں کی رحمت سے بھر گیا

 

روشن زمانہ ہو گیا نورِ مبین سے

وہ پیکر جمال جدھر سے گزر گیا

 

عشقِ حبیب تو تھا بلالِؓ کمال کا

تھا بے مثال عشق بھی ایسا ہی کر گیا

 

عقل و شعور کر نہ سکار عمر بھر جو کام

میرا جنون و شوق وہ لمحوں میں کر گیا

 

دستِ طلب بڑھانے کا سوچا جو وارثیؔ

دستِ عطا اٹھا مری جھولی کو بھر گیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ