اردوئے معلیٰ

Search

جس کا جو شغل ہے رہتا ہے اسی میں مشغول

ہے خوشا دل کو مرے مشغلۂ نعتِ رسول

 

عالموں سے بھی سنا اور یہی ہے منقول

آپ ہیں علتِ غائی یہ جہاں ہے معلول

 

مرحبا خالقِ اکبر سے ثنا ہے منقول

اللہ اللہ رے اخلاقِ رسولِ مقبول

 

وہ صحیفہ کے ہے موسوم بنامِ قرآں

اہلِ عالم کو ہوا آپ کے ہاتھوں موصول

 

میں سخن ساز نہیں آپ کا ایک ایک سخن

دل نشیں پُر اثر و صاف و مدلل معقول

 

دین تیرا کہ ہوا دہر میں جب جلوہ فشاں

سارے ادیان ہوئے سامنے اس کے مجہول

 

فوج باطل کی نہ ٹھہری ترے آگے زنہار

ضربتِ حق سے رہی ہو کے ‘کعصفٍ مَاکول’

 

پیشِ رب سجدہ گزاری کی تجھے تھی عادت

کاٹنا رات کا آنکھوں میں ترا تھا معمول

 

بحرِ ذخار ہے طوفاں ہے بھنور ہے آقا

اور ایسے میں سفینہ ہے مرا بے مستول

 

آپ فرمائیں دعا امتِ عاصی کے لئے

ہر دعا آپ کی امت کے لئے ہے مقبول

 

میرے آقا ترے دامن میں ملے مجھ کو پناہ

روزِ محشر یہ تمنا ہے رہوں نا مسؤل

 

سیرتِ پاک رہے میری نظرؔ کا مرکز

دینِ قیم پہ رہے میرے توجہ مبذول

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ