اردوئے معلیٰ

Search

جو تم ٹھہرو تو ہم آواز دیں عمرِ‌ گریزاں کو

ابھی اک اور نشتر کی ضرورت ہے رگِ جاں کو

 

کبھی ہم نے بھی رنگ و نور کی محفل سجائی تھی

کبھی ہم بھی سمجھتے تھے چمن اک رُوئے خنداں کو

 

کبھی ہم پر بھی یونہی فصلِ گل کا سحر طاری تھا

کبھی ہم بھی جنوں کا حق سمجھتے تھے گریباں کو

 

کہیں ایسا نہ ہو شیرازہِ ہستی بکھر جائے

نہ دیکھو اس توجہ سے کسی آشفتہ ساماں کو

 

کسی کا دوست ہے کوئی نہ کوئی دشمنِ جاں ہے

حزیں اپنے ہی سائے ڈس گئے کمبخت انساں کو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ