اردوئے معلیٰ

Search

جہان رب نے بنائے حضور کی خاطر

فلک پہ تارے سجائے حضور کی خاطر

 

وہ اوّلیں جو خدائے کریم کا گھر ہے

بنا ہے کعبہ رضائے حضور کی خاطر

 

دل ان کی یاد کی خاطر ہے دید کو آنکھیں

زبان مُنہ میں ثنائے حضور کی خاطر

 

جو کر دیں ایک اِشارہ ہو چاند دو ٹکڑے

پلٹ کے شمس بھی آئے حضور کی خاطر

 

تمام ہوگئے اقصیٰ میں انبیاء یک جا

جبینِ شوق جُھکائے حضور کی خاطر

 

قرار روحِ امیں کو بغیر ان کے نہیں

وہ سِدرہ چھوڑ کے آئے حضور کی خاطر

 

بُلندیاں اُسے دونوں جہاں میں ِملتی ہیں

جو اپنی ہستی مٹائے حضور کی خاطر

 

وہ مر کے بھی نہیں مرتا غلامِ سرورِ دِیں

جو جان اپنی لُٹائے حضور کی خاطر

 

نہ چھو سکے گی کبھی نارِ جہنم اُس کو

جو اپنے اشک بہائے حضور کی خاطر

 

الٰہی واسطہ تجھ کو رضا کا مرزا کو

عطا ہوں حرف ثنائے حضور کی خاطر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ