اردوئے معلیٰ

Search

خدایا! حاملِ آدابِ بندگی کردے

ہر این آں سے جدا میری زندگی کردے

 

جو کردے خِرمنِ باطل کو راکھ کا تودہ

تو اہلِ حق کو وہ نمناک شعلگی کردے

 

فضاے دہر پہ خوں ریزیاں محیط ہوئیں

فنا جہان سے یارب درندگی کردے

 

زبانِ حال کی گل کاریاں بڑھیں حد سے

عمل سے منسلک اب میری زندگی کردے

 

ہے مست اطلس و کمخواب میں بغفلت قوم

خدایا! دُور ہماری غنودگی کردے

 

شکست و ریخت سے دوچار ہیں مسلماں آج

اے چارہ گر! تو علاجِ شکستگی کردے

 

شرابِ عشقِ نبی دے رضاؔکے صدقے میں

جدا جنوں سے تو شکلِ ربودگی کردے

 

شکستہ ہیں پروبالِ مُشاہدِؔ خستہ

مرے خدایا! مُداواے خستگی کردے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ