اردوئے معلیٰ

Search

خستہ دل، نالہ بلب، شعلہ بجاں ٹھہرے ہیں

پھر بھی کس شوق سے سب اہلِ جہاں ٹھہرے ہیں

 

ناتواں دل ہے مگر عزم جواں ٹھہرے ہیں

ان سے پوچھے کوئی آ کر یہ کہاں ٹھہرے ہیں

 

نیند آ جائے ہمیں بھی نہ عیاذاً باللہ

سب یہ کہتے ہیں کہ وہ سحر بیاں ٹھہرے ہیں

 

ہم نے واعظ کو نہ پایا کبھی سرگرمِ عمل

دمِ تقریر مگر شعلہ بیاں ٹھہرے ہیں

 

کچھ سبب کیجیے معلوم کسی سے کہ ہمیں

کیوں یہ آفت زدۂ دورِ خزاں ٹھہرے ہیں

 

ہم تو ہیں سایۂ دیوارِ حرم میں لیکن

شیخ جی اپنی کہیں آپ کہاں ٹھہرے ہیں

 

ایسی باتیں ہیں کہ آشفتہ سری بڑھ جائے

اے نظرؔ اہلِ جنوں دشمنِ جاں ٹھہرے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ