اردوئے معلیٰ

Search

ذکرِ سرور سے عجب دھوم مچا دی جائے

محفلِ نعت پھر اِک بار سجا دی جائے

 

تذکرہ سیّدِ ابرار کا اس طور سے ہو

قلب اور ذہن سے ہر فکر بھلا دی جائے

 

ایک لمحے میں شفا پائے گناہوں سے مریض

خاک طیبہ کی اسے لا کے سنگھا دی جائے

 

نعت کہنے کے لیے تنگ قوافی ہیں بہت

اِک ردیف ایسی کوئی اور بنا دی جائے

 

جس میں رہتے ہیں مرے آقا کے گستاخ سبھی

اینٹ سے اینٹ اُس ایواں کی بجا دی جائے

 

جتنے بیمار ہیں کرتے ہیں دُعا مولا سے

ہم کو آقا کے وسیلے سے شفا دی جائے

 

حشر تک کفر کے ایوان منور ہوں گے

ذکرِ سرکار کی اِک شمع جلا دی جائے

 

ہر برس حاضری طیبہ کی مقدر ہے ترا

کاش ہر سال خبر یہ ہی سنا دی جائے

 

عرض کرتا ہے یہی آپ کا خاکیؔ آقا

حاضری طیبہ کی دوبارہ کرا دی جائے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ