سانولی

تُو رنگ برنگی روشنی، ترا کومل رُوپ سرُوپ

تُو چَھیل چھبیلی چھاؤں ھے، تُو نئی نویلی دُھوپ

 

گُل پُھول، ستارے، تتلیاں، ترے حُسن کے ھیں بہرُوپ

من مَوجی الہڑ پن ترا، حیران کنوارا رُوپ

 

انسان جُھکیں تعظیم کو، تری جدھر سواری جائے

تُجھے دیکھ فرشتے مست ھوں، خود خُدا بھی واری جائے

 

ترے بول تِھرَکتی راگنی، ترے گال گُلوں کے تاج

تری آنکھ ستارہ صُبح کا، تری کمر ندی کی لاج

 

لب سُرخ سجیلی پنکھڑی، ھر باغ پہ تیرا راج

ھر دل ھے تیری سلطنت، تُو کرے وصُول خراج

 

اُس راہ پہ چمکیں خُوشبوئیں جسے چُھو لے پاؤں ترا

تُو آسمان کی اپسرا اور عرش پہ گاؤں ترا

 

برپا تھا اک دن باغ میں ترے نَینوں کا دربار

سَو لاکھ رعایا تتلیاں، گُل پُھول غُلام ھزار

 

مَیں آخر صف میں آخری تھا مست دمِ دیدار

یک لخت ھُوا تری آنکھ کا کجرارا کاری وار

 

صد شُکر کہ تب سے دل مرا سردار ھے زخموں کا

مرا سینہ سینہ تو نہیں، شہکار ھے زخموں کا

 

ترے نرم الُوھی حُسن کی سَو سَو آیات دلیل

قُرآن کی کھاتے ھیں قسم، توریت، زبُور، انجیل

 

تُو ٹھنڈا زم زم نیلگُوں، ترا جسم انوکھی جھیل

تُو آنکھوں سے جب حُکم دے، ھر شخص کرے تعمیل

 

ترے انگ انگ میں روشنی ان گنت دُعاؤں کی

تُو دیوتاؤں کی لاڈلی، تُو جان خُداؤں کی

 

اَےمست مدُھر من موھنی ! مُجھے رُوپ کی دے خیرات

اَے پاک سُہانی سوھنی ! ھُوں خُشک، چھڑک برسات

 

اے من معبد کی راھبہ ! چل تھام لے میرا ھات

ان چُھوئی مُقدّس صاحبہ ! آ لمس کا چرخہ کات

 

ھم ازل ابد کے گھاٹ پر یُوں عشق میں تر ھوجائیں

تیرے اور میرے نام کے سب حرف امر ھوجائیں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

طلسم خانۂ امریکہ
عنایت
صبحِ غم بسلسلۂ مرگِ زوجۂ دوم (1980ء)
آنکھوں پہ گرد راہ ہے اور راہ گمشدہ
ای میل E-mail
کیا تم اک بات مجھے کُھل کے بتا سکتی ہو
سکوت ِشام میں چیخیں سنائی دیتی ہیں
جلوۂ ماہ ِ نو ؟ نہیں ؟ سبزہ و گل ؟ نہیں نہیں
یہ کیا کہ جب بھی ملو ، پوچھ کے ، بتا کے ملو
گر تمہیں شک ہے تو پڑھ لو مرے اشعار، میاں