اردوئے معلیٰ

شانِ محبوبِ وحدت پہ لاکھوں سلام

شانِ محبوبِ وحدت پہ لاکھوں سلام

نازِ ختم رسالت پہ لاکھوں سلام

تاجدارِ نبوت پہ لاکھوں سلام

عدل، تقویٰ، صداقت پہ لاکھوں سلام

یا نبی تیری سیرت پہ لاکھوں سلام

 

ہر طرف تیرے انوار سے چاندنی

ہر طرف تیرے کردار سے روشنی

ہر طرف تیری گفتار سے دل کشی

ہر طرف تیری سرکار سے زندگی

تیری پر نور صورت پہ لاکھوں سلام

 

ہر سحر میں ترے اسم سے رونقیں

ہر نظر میں ترے اسم سے رفعتیں

ہر زباں پر ترے اسم سے لذتیں

ہر بدن میں ترے اسم سے نکہتیں

اسم اقدس کی حرمت پہ لاکھوں سلام

 

تیرے اعجاز کیا کیا کروں میں بیاں

تیری مٹھی نے دی کنکروں کو زباں

تیری تحریم سے ہے زمیں، آسماں

تیری تجسیم ہے باعثِ دو جہاں

تیری عظمت پہ رفعت پہ لاکھوں سلام

 

سب رسولوں نے کی ہے تیری آرزو

دشمنوں نے بھی کی ہے تیری جستجو

تجھ سے دونوں جہانوں میں ہے رنگ و بو

میرا بھی آسمانِ محبت ہے تو

تیری رحمت پہ رافت پہ لاکھوں سلام

 

تو ہی بحرِ کرم دستِ جود و سخا

کوئی ثانی ترا ہے نہ سایہ ترا

اس نے پایا خدا جس کو تو مل گیا

لائقِ وصف ہے تو ہی بعد از خدا

تیری عظمت پہ رفعت پہ پہ لاکھوں سلام

 

اے حبیبِ خدا خاتمِ مرسلاں

اتنی بے انتہا ہیں تری خوبیاں

کر سکا ہے بیاں کوئی اب تک کہاں

اک نظر آسؔ پر، کر سکے کچھ بیاں

تیری چشمِ عنایت پہ لاکھوں سلام

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ