اردوئے معلیٰ

Search

شبیرؑ ترے صبر کو ہم کیسے بھلائیں

اندر سے نکل پڑتی ہیں ماتم کی صدائیں

 

اک بوند بھی پانی کی اُٹھا کر نہیں لائیں

تھیں کس کے تعاقب میں وہاں تیز ہوائیں

 

شبیرؑ کھلے آپ پہ اسرارِ حقیقت

کب لوگ سرِ دار یوں عرفان کو پائیں

 

اسلام کو کی زیست عطا جان کے بدلے

دیتی ہیں جبیں آج بھی سیّد کو دعائیں

 

لگتا ہے ابھی حشر میں کچھ دیر ہے باقی

اکبر کو بلائیں، علی اصغرؑ کو سجائیں

 

ہم پھر بھی حسینؑ تیرے مقروض رہیں گے

عاشور کو کتنی بھی عقیدت سے منائیں

 

احسان ہے اے ابنِ علیؑ! آپ کا احساں

مقبول ہوئی ہیں میری گستاخؔ ادائیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ