اردوئے معلیٰ

Search

عطا کردے الٰہی سیّدِ ابرار کا صدقہ

مجھے درکار ہے اُس پیکرِ انوار کا صدقہ

 

مرے آقا کرم کیجے کہ پھر اِذنِ حضوری ہو

سنہری جالیوں کا گنبد و مینار کا صدقہ

 

مجھے بھی اپنے قدموں میں بلا لیجے مرے آقا

مدینے شہر کے نوری در و دیوار کا صدقہ

 

مسلمانوں کو پھر اصحاب جیسے حکمراں دیجے

جو حیدر کو عطا کی تھی اُسی تلوار کا صدقہ

 

عطا فرمایئے آقا فقیروں بے نواؤں کو

عمر، عثمان و حیدر اور یارِ غار کا صدقہ

 

مدینے میں خدا کی رحمتیں ہر دم برستی ہیں

جہاں سب پا رہے ہیں ہر گھڑی سرکار کا صدقہ

 

تصدق میں نبی کے رب نے ساری نعمتیں بخشیں

زمانہ کھا رہا ہے احمدِ مختار کا صدقہ

 

کوئی خالی نہیں لوٹا کبھی طیبہ سے اے خاکیؔ

ازل سے بٹ رہا ہے آپ کے گھر بار کا صدقہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ