اردوئے معلیٰ

Search

دلِ معصوم کو آتنک وادی کردیا نا

مرے سینے میں اک ٹکڑا فسادی کردیا نا

 

جو تیری قربتوں سے آشنا تھی اس ہوا نے

تری خوشبو کو گلیوں میں منادی کر دیا نا

 

کبھی وہ میرا دل تھا اب جو تیری سلطنت ہے

محبت کر کے تجھ کو شاہزادی کر دیا نا

 

پھر اس نے ختم کردی ہے محبت کی کہانی

مگر آنکھوں کو تو خوابوں کا عادی کردیا نا

 

ہے یہ شاید مسلسل یاد آنے کا نتیجہ

تمہارا ذکر میں نے غیر ارادی کر دیا نا

 

حسن دیکھا دلوں میں پلنے والی رنجشوں نے

جو مشترکہ تھا اس کو انفرادی کر دیا نا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ