اردوئے معلیٰ

Search

میانِ حشر کچھ ایسے مری تقدیر چمکے

مرے ماتھے پہ ’’عبدِشاہ‘​‘​ کی تحریر چمکے

 

پسِ احساس مہکے خواب تیری نکہتوں کا

نظر کے سامنے پھر خواب کی تعبیر چمکے

 

کچھ ایسے مستقل ہو نعت کا عنوانِ نسبت

مری نسلوں میں بھی اس خیر کی تاثیر چمکے

 

ترا اسمِ کرم نطق و بیاں کی روشنی ہے

مرے آقا! تری مدحت سے بے تدبیر چمکے

 

ڈرا دیتا ہے ویسے تو خیالِ یومِ پُرسش

سنبھل جاتا ہے دل جب پیکرِ تبشیر چمکے

 

مدینہ جیسے خواہش کا سدا نقشِ مکمل

سفر سے پیشتر آنکھوں میں وہ تصویر چمکے

 

جمالِ نقشِ نعلینِ کرم ہے متنِ تابش

بیانِ زُلفِ عالم تاب سے تفسیر چمکے

 

ترے شہرِ ضیا پرور کی دہلیزِ عطا سے

کفِ شب پر نئے امکان کی تفجیر چمکے

 

بہ فیضِ نعتِ رحمت زیست تسکینِ مکمل

درودِ پاک سے تقدیرِ ظلمت گیر چمکے

 

وہیں پر ہو رہے ہیں عزتوں کے اسم اونچے

درِ خیر الوریٰ پر قسمتِ توقیر چمکے

 

ثنا گوئی نہیں مقصودؔ کچھ کارِ ریاضت

کرم سے ہی ترا یہ خامۂ تقصیر چمکے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ