اردوئے معلیٰ

Search

میں سجّے ہتھ کو بیٹھا تھا ادھر بازار کے وچ میں

وہ کبھّے ہتھ سے میرے کول گذرے کار کے وچ میں

 

اکیلے تو نہیں ملتے جدوں بھی اب وہ ملتے ہیں

کبھی چھ سات کے وچ میں کبھی دوچار کے وچ میں

 

میں بولا، بادشاہو! میری اِک چھوٹی سی گَل سُن لو

وہ بولے، چھڈو جی! کیا گل سنیں بازار کے وچ میں

 

لبوں کے وِچ لئے پھرتا ہے تُو گُل قند او ظالم

مِلا گل قند تھوڑی شربتِ دیدار کے وچ میں

 

کبھی مینوں بھی لے چل ظالماں تُو وچ کلفٹن کے

کدوں تک میں رہوں گا “گولی مار“ کے وچ میں

 

سویرے اُٹھ کے منگھے پیر کے وچ ایہہ دعا مانگی

خدا مجھ کو بھی پہنچا دے تِرے دربار کے وچ میں

 

وہ میری “ہیر“ ہے اور میں ہوں “رانجھے خاں“ مجید اُس کا

ہمارا ذکر ہے ہر کوچہ و بازار کے وچ میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ