اردوئے معلیٰ

Search

نعتِ احمد ہوئی ہم دم مری تنہائی کی

پردۂ غیب سے یوں شہ نے مسیحائی کی

 

خاکِ راہ شہِ والا پہ فدا ہو جاؤ

بات بتلائی ہے کیا عشق نے دانائی کی

 

شہرِ طیبہ کے مسافر کو یہ اعزاز ملا

خود درِ شاہ کی خوشبو نے پذیرائی کی

 

حُسن دینے لگا اُٹھ اُٹھ کے صدائے تحسین

جب چِھڑی بات رُخ یار کی رعنائی کی

 

کُحلِ خاکِ در سرکار لگا آنکھوں میں

اور بڑھ جائے گی قوّت تری بینائی کی

 

نعت کہتا ہوں تو تکتی ہیں نگاہیں مجھ کو

ورنہ سنتا تھا کوئی شہر میں سودائی کی؟

 

نورِ سرکارِ دو عالم کے جلو میں آکر

بن گئی بات بنو سعد کی اک دائی کی

 

پھول کھل کھل کے بہاروں کے تجھے دیکھتے ہیں

خارِ طیبہ ہے وہ زینت تری رعنائی کی

 

بھیجے آقا کو درودوں کے تحائف میں نے

غم نے جب جب بھی مرے ساتھ شناسائی کی

 

دل نے اک خاص سرور اور سکوں پایا ہے

ذکرِ سرکار میں جب انجمن آرائی کی

 

اس کو ہر ایک زمانے نے بٹھایا سر پر

جس نے سرکار کے قدموں میں جبیں سائی کی

 

گُل نہ ہو پایا کبھی میرا چراغ اُمّید

مثل لائے گا کہاں کوئی اس آقائی کی

 

ان کی رحمت کے تصدق ہوں کہ وقتِ پرسش

لاج رکھ لی گئی مجھ ایسے بھی سودائی کی

 

حشر میں مجھ کو وہ دامن میں چھپائیں ازہرؔ

اک تمنّا ہے یہی ان کے تمنّائی کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ