اردوئے معلیٰ

پھول سا کوئی ہم زباں اچھا

پھول سا کوئی ہم زباں اچھا

پھول اچھے نہ گلستاں اچھا

 

غم نصیبوں کا ایک ہی آنسو

بلبل و گل کے درمیاں اچھا

 

کل نئی سوچ کی سحر ہوگی

آج وہ ہم سے بدگماں اچھا

 

ریگزاروں میں یا گلستاں میں

آپ کہیے کہ میں کہاں اچھا

 

منزلیں تو ہزار ملتی ہیں

اک مسافر رواں دواں اچھا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ