اردوئے معلیٰ

کب چھڑایا نہیں ہم کو غم سے کب مصیبت کو ٹالا نہیں ہے

 

کب چھڑایا نہیں ہم کو غم سے کب مصیبت کو ٹالا نہیں ہے

کب کڑی دھوپ میں مصطفیٰ نے سایہ کملی کا ڈالا نہیں ہے

 

ان کی رحمت کا کیا ہے ٹھکانا دیکھ لے سوئے طائف زمانہ

موسم سنگ باری میں لب پر کیا دُعا کا اُجالا نہیں ہے

 

لاج رکھی گئی ہر صدا کی دل نوازی ہوئی ہر گدا کی

ہے سخی اُن کا دربار ایسا کسی سائل کو ٹالا نہیں ہے

 

گونج ان کی ثناء کی رہی ہے، ہر نبی نے خبر ان کی دی ہے

کوئی ایسا صحیفہ نہیں ہے جس میں ان کا حوالہ نہیں ہے

 

لڑکھڑاتا ہوا جب چلا ہوں بھیڑ نے راستہ دے دیا ہے

راہِ ہستی میں ان کے کرم نے کس جگہ پر سنبھالا نہیں ہے

 

ہے جہاں بھی حکومت خدا کی رحمتیں ہیں وہیں مصطفی کی

سارے عالم ہیں چشم کرم میں کس جگہ کملی والا نہیں ہے

 

اُن کی مدحت پہ مامور ہوں میں، غیر کی مدح سے دور ہوں میں

فکر و فن کو صبیحؔ اپنے میں نے کبھی غزلوں میں ڈھالا نہیں ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ