کرم کا سائباں سر پر ہے میرے

کرم کا سائباں سر پر ہے میرے

خدائے اِنس و جاں سر پر ہے میرے

نہیں خائف ظفرؔ حاسد کے شر سے

خدائے مہرباں سر پر ہے میرے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جو حقِ ثنائے خدائے جہاں ہے
سننے والا ہے جو دعاؤں کا
جلوہ ہے یا نُور ہے ،یا نُور کا پردہ تیرا
خُداوندِ کون و مکاں، اللہ اللہ
میں لکھوں حمد ربِّ مصطفیٰؐ کی
مری مشکل خدایا کر دے آساں
خدا ارفع، عظیم و محتشم ہے
خدا سارے زمانوں کا ہے خالق
کرم فرمائی رب کی بیشتر ہے
خدا سے وصل ہو دل چاہتا ہے