اردوئے معلیٰ

کمتر تھا جذب و شوق، کرم بیشتر رہا

مجھ سا غریبِ حرف ترا مدح گر رہا

 

گرچہ دُعائے عجز میں اِک بے دلی سی تھی

پڑھتا رہا درود تو بے حد اثر رہا

 

رحمت نے اُن کی تھام لیا عرضِ حال کو

دل محوِ حرفِ شوق تھا سو بے خبر رہا

 

تابِ نظر ذرا بھی نہ تھی فرطِ نور سے

پیشِ نظر وہ چہرۂ انور مگر رہا

 

کہنے کو لَوٹ آئے تھے یہ جسم و جاں، مگر

دِل گردِ رہگذر تھا سرِ رہگذر رہا

 

اُن کی ثنا نے لاج رکھی حرف و صوت کی

مجھ ایسا بے ہنر بھی بہت مُعتبر رہا

 

مقصودؔ اُن کے اِسمِ گرامی کی طلعتیں

اِک نور تھا کہ چاروں طرف سر بسَر رہا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔