اردوئے معلیٰ

Search

کچھ اور عشق کا حاصل نہ عشق کا مقصود

جزآنیکہ لطفِ خلش ہائے نالہء بے سود

 

مگر یہ لطف بھی ہے کچھ حجاب کے دم سے

جو اٹھ گیا کہیں پردہ تو پھر زیاں ہے نہ سود

 

ہلائے عشق نہ یوں کائناتِ عالم کو

یہ ذرّے دے نہ اٹھیں سب شرارہء مقصود

 

کہو یہ عشق سے چھیڑے تو سازِ ہستی کو

ہر ایک پردہ میں نغمہء “ہُوالموجود“

 

یہ کون سامنے ہے؟ صاف کہہ نہیں سکتے

بڑے غضب کی ہے نیرنگیِ طلسمِ نمود

 

اگر خموش رہوں میں، تو تُو ہی سب کچھ ہے

جو کچھ کہا، تو ترا حسن ہوگیا محدود

 

جو عرض ہے، اُسے اشعار کیوں مرے کہیے

اچھل رہے ہیں جگر پارہ ہائے خوں آلود

 

نہ میرے ذوقِ طلب کو ہے مدّعا سے غرض

نہ گامِ شوق کو پروائے منزلِ مقصود

 

مرا وجود ہی خود انقیاد و طاعت ہے

کہ ریشہ ریشہ میں ساری ہے اِک جبینِ سجود

 

مقامِ جہل کو پایا نہ علم و عرفاں نے

میں بے خبر ہوں باندازہء فریب شہود

 

جو اڑ کے شوق میں یوں محوِ آفتاب ہوا

عجب بلا تھا یہ شبنم کا قطرہء بے بود

 

چلوں، میں جانِ حزیں کو نثار کر ڈالوں

نہ دیں جو اہلِ شریعت، جبیں کو اذنِ سجود

 

وہ رازِ خلقتِ ہستی، وہ معنیء کونین

وہ جانِ حُسنِ ازل، وہ بہارِ صبحِ وجود

 

وہ آفتابِ حرم، نازنینِ کُنجِ حرا

وہ دِل کا نور، وہ اربابِ درد کا مقصود

 

وہ سرورِ دو جہاں، وہ مُحمّدِ عربی

بہ روحِ اعظم و پاکش درودِ لامحدود

 

صبائے حُسن کا ادنیٰ سا یہ کرشمہ ہے

چمک گئی ہے شبستانِ غیب و بزمِ شہود

 

نگاہِ ناز میں پنہاں ہیں نکتہ ہائے فنا

چھُپا ہے خنجرِ ابرو میں رمزِ “لا موجود“

 

وہ مستِ شاہدِ رعنا، نگاہ سحر طراز

وہ جام نیم شبی نرگسِ خمار آلُود

 

کچھ اس ادا سے مِرا اُس نے مدّعا پوچھا

ڈھلک پڑا مری آنکھوں سے گوہرِ مقصود

 

ذرا خبر نہ رہی بوش و عقلِ ایماں کی

یہ شعر پڑھ کے وہیں ڈال دی جبینِ سجود

 

“چو بعد خاک شدن یا زیاں بود یا سود

بہ نقد خاک شوم بنگرم چہ خواہد بُود“

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ