اردوئے معلیٰ

Search

کیا عرض ہو رَفعِ یدِ نِعمات سے پہلے

دامن بھی جہاں ملتا ہو خیرات سے پہلے

 

بڑھتا ہی نہیں دستِ معارض مری جانب

وہ میری خبر رکھتے ہیں حالات سے پہلے

 

کیا طُرفہ کرشمہ ہے کہ رہتی ہے مسلسل

تبشیرِ عنایت سی عنایات سے پہلے

 

پھر بعد میں جو چاہیں نکیرین کی مرضی

مَیں نعت سُنا لوں گا سوالات سے پہلے

 

مکّے کو بھی جائیں گے مدینے کی بدولت

محظوظ تو ہم ہو لیں مدارات سے پہلے

 

سب اسم تھے مکنون ترے اسم کی خاطر

موہوم تھی ہر بات تری بات سے پہلے

 

صد شکر کہ خوش آئی تری نعت کی نعمت

واللہ! مجھے نسبتِ سادات سے پہلے

 

ترحیب کو جاں آئے گی خود جسم سے باہر

آئیں گے وہ جب نزع کی ساعات سے پہلے

 

تھی آپ کے ہی واسطے میثاق کی محفل

جُز آپ کے تھا کون شروعات سے پہلے

 

اللہ کو معلوم ہے کیسا تھا، کہاں تھا

منصب وہ ترا خِلقِ مقامات سے پہلے

 

حاجت نہیں اُس سمعِ معالی کو بیاں کی

مقصودؔ وہ سُن لیتے ہیں حاجات سے پہلے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ