اردوئے معلیٰ

Search

کیسے امیر کس کے گدا تاجدار کیا

دارالفنا میں جبر ہے کیا اختیار کیا

 

وہ تیز دھوپ ہے کہ پگھلنے لگے ہیں خواب

زلفوں کے سائے دیں گے فریب بہار کیا

 

آباد کر خرابۂ ذہن و خیال کو

شہروں میں ڈھونڈھتا ہے سکون و قرار کیا

 

سمٹے تو مشت خاک ہے یہ آدمی کی ذات

بکھرے تو پھر یہ عرصۂ لیل و نہار کیا

 

میں ہوں سروشؔ بندۂ مجبور و ناتواں

مجھ میں بھی تیرا عکس ہے پروردگار کیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ