اردوئے معلیٰ

ہر سمت میں ہے تو جلوہ نما اے نور محمد صلی اللہ

ہر سمت میں ہے تو جلوہ نما اے نور محمد صلی اللہ

آفاق کو تو نے گھیر لیا اے نور محمد صلی اللہ

 

دکھلا کے چمک بالائے فلک آدم کو کیا مسجود ملک

موسیٰ کو بنایا انی انا اے نور محمد صلی اللہ

 

تو سب میں نہاں سب تجھ سے عیاں ہے تیرے لئے یہ کون و مکاں

باہر ہے بیاں سے تیری ثنا اے نور محمد صلی اللہ

 

تنزیہہ تو ہی تشبیہ تو ہی ہر وجہ سے ہے توجیہہ تو ہی

ہے تیری صفت لولاک لما اے نور محمد صلی اللہ

 

ہر حسن ادا ہے تیری ادا ہے تیری حقیقت کن سے جدا

عاشق ہے تری صورت پہ خدا اے نور محمد صلی اللہ

 

جب تو نے دکھایا روئے حسیں ارواح جہاں مرآت بنیں

موجود ہوئے یہ ما و شما اے نور محمد صلی اللہ

 

آغاز تو ہے انجام تو ہے ایمان تو ہی اسلام تو ہے

ہے تجھ پہ عزیزؔ خستہ فدا اے نور محمد صلی اللہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ