اردوئے معلیٰ

Search

 

ہر گوشہ آسماں ہے زمینِ حجاز کا​

حاصل ہے اس نشیب کو رتبہ فراز کا​

 

نورِ خدا ہے شکلِ محمد میں جلوہ گر​

آئینہ شاہکار ہے آئینہ ساز کا​

 

کس کو ملا یہ حسنِ شرف آپ کے سوا​

محرم ہے اور کون مشیت کے راز کا​

 

دل گونجتا ہے صلِّ علےٰ کی صداؤں سے ​

یہ نغمہ خلدِ گوش ہے ہستی کے ساز کا​

 

صبحِ ازل سے شامِ ابد تک محیط ہے​

دامانِ التفات نگارِ حجاز کا​

 

میرا طواف کرتے ہیں مہر و مہ و نجوم​

مدحت سرا ہوں میں شہِ گردوں طراز کا​

 

شاہانِ دہر جس کے غلاموں کے ہیں غلام​

بندہ ہوں میں اُسی شہِ بندہ نواز کا​

 

میری نظر میں سنّت و فرض ایک ہیں ایاز​

آموز گار ایک ہے سب کی نماز کا​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ