اردوئے معلیٰ

ہمیشہ جانبِ حسنِ عمل روانہ کیا

کبھی برائی کو تو نے شہا ! روا نہ کیا

 

سجودِ حرف بہ ہر وقت خاشعانہ کیا

نمازِ نعت کو ہم نے کبھی قضا نہ کیا

 

رہا خموش یا سائل نے کچھ بہانہ کیا

کرم ، کریم نے کس وقت بے بہا نہ کیا ؟

 

ترے عدو سے رہ و رسم کو روا نہ کیا

ہمیشہ ترے غلاموں سے دوستانہ کیا

 

اسی نے تجھ سے تعلق کو عاشقانہ کیا

جسے مُحرِّرِ قسمت نے ذی شِقا نہ کیا

 

جو دل کو حاصلِ ایمان پر فدا نہ کیا

تو جان لو کہ ہے یکساں ، عمل کیا نہ کیا

 

اے وجہِ طیّ زمان و مکاں ! شہِ معراج

جو چاہا آپ نے پل بھر کو صد زمانہ کیا

 

شکم پہ باندھ کے پتّھر کسی نے کاٹی عمر

کسی نے بیسیوں کھانوں پہ اکتفا نہ کیا

 

کسی کو سجدے سے مانع نہ ہوسکی تلوار

کسی نے امن و مسرت میں بھی ادا نہ کیا

 

بھرے نہ کاسہ کسی کا جو بابِ شہرِ علم

درِ سخن کبھی اس پر خدا نے وا نہ کیا

 

ہے گل کو حالِ عنادل کا علم ، سو ہم نے

پیامِ شوق کو منّت کشِ صبا نہ کیا

 

نصوصِ قاطعہ شاہد ہیں بر ملا ، رب نے

کسی کو تیرے سوا ختمِ انبیا نہ کیا

 

ثنائے شاہِ معظم کا فیض ، کیا کہیے

کہ جس نے مجھ سے دو آنہ کو سولہ آنہ کیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ