اردوئے معلیٰ

Search

یا نبی گر چشمِ رحمت آپ کی مِل جائے گی

نخلِ ایماں کو ہمارے تازگی مِل جائے گی

 

بادشاہانِ زمانہ بھی کریں گے احترام

مصطفیٰ کے در کی جسکو چاکری مِل جائے گی

 

رنج و غم نے گر ستایا ہے چلے آؤ یہاں

بِالیقیں طیبہ کی گلیوں میں خوشی مِل جائے گی

 

ہو جو عشق و معرفت کی گر نظر قرآن میں

تم کو ہرجا بے شُبہ نعتِ نبی مِل جائے گی

 

مت بنو مغرب زدہ روشن خیالی چھوڑ دو

سیرتِ خیرالوریٰ سے روشنی مِل جائے گی

 

ہے اگر تسخیرِ عالم کی جو دل سے جُستجو

دیکھ لو قرآن پڑھ کر آگہی مل جائے گی

 

سیرتِ خیر الوریٰ سے اِستِفادہ ہو اگر

مضطرب دنیا کو امن و آشتی مل جائے گی

 

اُس وطن میں ہے مرا مسکن خدا کے فضل سے

قریہ قریہ نعت کی محفل سجی مل جائے گی

 

اعلیٰ حضرت کے کلاموں پر رہے گہری نظر

تم کو مرزا شاعری میں پختگی مل جائے گی

 

کام مرزا کا بنے گا حشر میں سرکار سے

گر دُعائے ربِّ ہَبْلِی اُمتی مل جائے گی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ