اردوئے معلیٰ

Search

آئینہ دل کا ہے پھر چہرہ نمائے صدیقؓ

پھر عقیدت کو ہوا شوقِ ثنائے صدیقؓ

 

قابلِ رشک ہے تقدیرِ رسائے صدیقؓ

ہے نبوت کی زباں مدح سرائے صدیقؓ

 

جو پیمبر کی نوا وہ تھی نوائے صدیقؓ

جو پیمبر کی رضا وہ تھی رضائے صدیقؓ

 

تھی سکوں بخش پیمبر کو لقائے صدیقؓ

اللہ اللہ وہ کیا ہو گی ادائے صدیقؓ

 

اپنے کاندھوں پہ محمد کو اٹھائے صدیقؓ

غار لے جا کے بہ آرام لٹائے صدیقؓ

 

اپنا زانوئے ادب تکیہ بنائے صدیقؓ

کاٹ لے سانپ تو ایڑی نہ ہٹائے صدیقؓ

 

ثبتِ قرآں جو ہوئی گفتگوئے لا تحزن

ہم سمجھتے ہیں اسے مہرِ بقائے صدیقؓ

 

وہ مصدق وہ وفا کیش و فدا کارِ رسول

ایسے دنیا میں تو بس ایک ہی آئے صدیقؓ

 

بخت ایسا کہ نہیں اور کسی کا ویسا

صدق اتنا کہ کہیں اپنے پرائے صدیقؓ

 

گردِ تشکیک نہیں نورِ یقیں سے بھر پور

روشن آئینہ ہے اک قلبِ صفائے صدیقؓ

 

کل اثاثہ رہِ مولیٰ میں لٹانے والا

لائقِ دید ہے معیارِ غنائے صدیقؓ

 

نوعِ انساں میں نہیں اس کا کوئی ہم رتبہ

اس کے رتبہ کو نہ پہنچے خلفائے صدیقؓ

 

بعدِ مردن بھی دیا ساتھ نبی کا اس نے

وقف پہلوئے نبی ایک برائے صدیقؓ

 

طبعِ ناسازِ نبی تارکِ سجادۂ پاک

کر سکا کوئی امامت نہ سوائے صدیقؓ

 

دل نچھاور کئے دیتے ہیں مسلماں اس پر

وہ پیمبر پہ فدا سب ہیں فدائے صدیقؓ

 

راہرو راہِ وفا کے نہ کبھی بھٹکیں گے

رہنما ہیں جو نقوشِ کفِ پائے صدیقؓ

 

ان کو حاصل ہوئی خوشنودی شاہِ بطحا

کیوں نہ صدیقؓ سے راضی ہو خدائے صدیقؓ

 

ہوں نظرؔ منسلکِ سلسلۂ لاثانی

میں غلامِ فقراءُ الفقرائے صدیقؓ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ