اردوئے معلیٰ

Search

 

دلِ پر شوق ہے پھر غوطہ زنِ بحرِ خیال

جستجو میں ہے دُرِ نعت کوئی لائے نکال

 

معجزہ یہ ہے بہ یادِ شہِ اقلیمِ جمال

منعکس آج بصد رنگ ہے فانوسِ خیال

 

آنکھ بھر کر اسے دیکھے ہے کسے اتنی مجال

ذاتِ اقدس میں ہے وہ دبدبہ و جاہ و جلال

 

حسنِ خورشید و قمر دونوں زوال آمادہ

آپ کے حسن سے کیا میل کہ دوں اس کی مثال

 

کوئی آساں تو نہیں ذکرِ کمالاتِ نبی

ہر کمال آپ میں موجود ہے تا حدِ کمال

 

سایہ گستر ہے دعائے شہِ بطحا ہم پر

یہ مٹا دے ہمیں کیا فتنۂ دوراں کی مجال

 

ان کے دربارِ گہر بار کا منظر واللہ

شہ و سلطاں بھی ہیں پھیلائے ہوئے دستِ سوال

 

امتی چھوڑ دیں دامانِ نبی نا ممکن

ان کے داماں سے ہی وابستہ ہے مستقبل و حال

 

دل تڑپتا ہے مگر جاؤں مدینہ کیونکر

وائے مجبور ہوں فی الوقت زِ نیرنگی حالات

 

ڈالنا بعد میں اس روضۂ اقدس پہ نظرؔ

ادباً اشکِ مقطر سے اسے پہلے کھنگال

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ