اردوئے معلیٰ

Search

کریم اپنی ہی خاکِ عطا پہ رہنے دے

زمیں سے آیا ہوا ہوں سما پہ رہنے دے

 

بکھر نہ جاؤں کہیں برگِ بے شجر کی طرح

کریم، شاخِ کرم کی وفا پہ رہنے دے

 

بہت ہی تیز ہواؤں نے گھیر رکھا ہے

کریم ، ہاتھ مرے دل دِیا پہ رہنے دے

 

خطائیں لایا ہوں نعتوں کی طشت میں رکھ کر

یہ ایک پردہ مری ہر خطا پہ رہنے دے

 

عجیب طرح کی سرشاریوں میں ہوں آقا

جبینِ شوق ذرا نقشِ پا پہ رہنے دے

 

کریم بھی ہے وہ قہّار بھی ہے اور جبّار

سلامِ خیر کا سایہ دُعا پہ رہنے دے

 

اُدھیڑ ڈالے گا مجھ کو یہ ہجر کا خدشہ

گلابِ وصل کو شاخِ لقا پہ رہنے دے

 

اُسی کے دامنِ رحمت کو تھام لے مقصودؔ

خدا کی مرضی حبیبِ خدا پہ رہنے دے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ