اردوئے معلیٰ

Search

خدائے کل کی محبت کا انتخاب حضور

نصابِ عشق کی کامل تریں کتاب حضور

 

ستارے تھے جو خبر دے رہے تھے طلعت کی

ہیں ُکہنہ چرخِ نبوت کے آفتاب حضور

 

حضور آپ کے آنے سے معتبر ٹھہری

وگرنہ زیست تو جیسے تھی اِک سراب، حضور

 

شہودِ خالقِ مطلق کا سب سے تاباں نشاں

وجودِ خلقِ دو عالَم کی آب، تاب حضور

 

الگ یہ بات کہ آتے ہی دُھل گئے سارے

گناہ ساتھ تو لایا تھا بے حساب، حضور

 

ترے کرم کے مقابل کہاں یہ حرفِ نیاز

کہ نعت محض ہے جذبوں کا انتساب، حضور

 

تو اذن دے تو حضوری کے شہر جا پہنچے

جو آنکھ میں لئے پھِرتا ہُوں ایک خواب، حضور

 

حذر گمانِ تمثل سے، بار بار حذر

کہاں مثال ہے تیری، کہاں جواب، حضور

 

عطائے خاص کہ بخشی ہے تو نے حرف کی بھیک

کھلا رہے تری توفیق کا یہ باب حضور

 

تو ایک رحمت و بخشش کا بحرِ بے اطراف

مَیں ایک قطرۂ بے مایہ اور حباب، حضور

 

خطا سرشت ہُوں لیکن ہوں مطمئن مقصود ؔ

کہ عیب ہونے نہیں دیں گے بے نقاب حضور

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ