اردوئے معلیٰ

Search

محورِ دو سرا پہ قائم ہے

زیست ان کی رضا پہ قائم ہے

 

نظمِ نطق و نظامِ حرف و ہنر

تیری مدح و ثنا پہ قائم ہے

 

نیلگوں آسمان کی رفعت

آپ کے نقشِ پا پہ قائم ہے

 

موجۂ خندۂ گلِ خوش رنگ

تیرے لطف و عطا پہ قائم ہے

 

یہ نظامِ جہانِ عفو و کرم

آپ ہی کی رضا پہ قائم ہے

 

سب کو دیتا ہے وہ طفیلِ نبی

یہ عقیدہ ُخدا پہ قائم ہے

 

کارگاۂ حیات میں مقصودؔ

سارا منظر عطا پہ قائم ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ