اردوئے معلیٰ

Search

نعت پیکر باندھتی ہے اذن کی تاثیر سے

یہ چمن کھِلتا نہیں ہے حرف کی تدبیر سے

 

رات تیری یاد کی طلعت سے لیتی ہے نیاز

صبح رنگوں میں اُترتی ہے تری تنویر سے

 

اِس سے آگے کا سفر ہے آپ کا پہلا قدم

فکر تو گھائل ہے اَو ادنیٰ کے پہلے تیر سے

 

دل تو بے خود ہو کے گر پڑتا ہے اُن کے روبرو

اور جبیں کو باندھتا ہوں شرع کی زنجیر سے

 

آنکھ کے موتی پرو لایا ہُوں سلکِ شوق میں

نعت بن پاتی نہیں تھی خامہ و تحریر سے

 

نقشِ نعلینِ کرم بنتا ہے اور اُڑ جاتا ہے

جوڑتا رہتا ہُوں دل کو دل کی ہی تصویر سے

 

پھِر مرے کانوں میں آیا ہے بلاوا نُور کا

ایک موتی سا گِرا ہے پھر کفِ تقدیر سے

 

نسبتِ اسلام قائم ہے ستُونوں پر، بجا

نسبتِ ایمان بنتی ہے تری توقیر سے

 

گو مدینے میں نہیں ہُوں، پر مدینے سے تو ہُوں

کچھ تو نسبت ہے مری بھی نُور کی جاگیر سے

 

آج پھر ملنے ہیں قسمت کو نئے اوج و عروج

اِک نیا مژدہ مِلا ہے خواب کی تعبیر سے

 

روز ہی مقصود کھُلتا ہے نیا بابِ عطا

قصرِ مدحت بن رہا ہے روز کی تعمیر سے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ