اردوئے معلیٰ

Search

رات کی آنکھ لگی، خواب کا منظر جاگا

دل دریچے سے تری دید کا خاور جاگا

 

ایک لمحے کو تو تھا اسم وہ آنکھوں میں رواں

پھر مری روح میں چمکا، مرے اندر جاگا

 

نکہت و نُور سے لکھنی تھی تری نعت، مگر

حرفِ بے خود مری تدبیر سے اُوپر جاگا

 

ذرہ چاہا تو ستاروں نے کیا میرا طواف

قطرہ مانگا تو عطاؤں کا سمندر جاگا

 

کیا عجب شان سے آیا وہ حرا کا وارث

جیسے تقدیر کے ماتھے پہ مقدر جاگا

 

شوکتِ حرف سے ممکن نہ تھی تصویرِ جمال

مصرعۂ نعت کی خاطر مہِ انور جاگا

 

ہمّتِ کاسہ تھی اِک بار سے آگے نہ بڑھی

دستِ رحمت تھا کہ ہر بار مکرّر جاگا

 

باقی کرنیں تھیں سو غائب ہوئیں ہر عصر کے ساتھ

ایک سورج ہے کہ ہر شب میں برابر جاگا

 

امتی تجھ پہ تو نازاں ہے ترا وقتِ رواں

امتی تیرے لیے تیرا پیمبر جاگا

 

اُن کے آنے کی خبر تھی، ہوئے منظر بے خود

دید کی دُھن پہ مرا خانۂ بے در جاگا

 

صبحِ حیرت نے دیا اذنِ سفر کا مژدہ

دشتِ بے آب میں مقصود گُلِ تر جاگا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ