اردوئے معلیٰ

Search

شعبِ احساس میں ہے نور فِشاں گنبدِ سبز

بحرِ صد رنگ ہے اور خُوب رواں گنبدِ سبز

 

سامنے آنکھوں کے ہے اور نہیں آنکھوں میں

ایک امکاں ہے کہ ہے جذبِ نہاں گنبدِ سبز

 

ویسے تو ہوتے ہیں تغییر طلب سبزہ و گُل

ایک گُل ہے کہ نہیں خوفِ خزاں گنبدِ سبز

 

دیدۂ خواب میں اِک حُسن کا عنواں جیسے

پیکرِ شوق میں ہے روحِ رواں گنبدِ سبز

 

ویسے تو حرف نے کھینچی نہیں تمثیلِ جمال

ہے مگر رشک گہِ طُور و جناں گنبدِ سبز

 

صحنِ مسجد میں جہاں بیٹھیں اسے ہی دیکھیں

محورِ دیدہ و دل کنجِ عیاں گنبدِ سبز

 

پاسِ آدابِ مواجہ تو ہے اِک ضبط، مگر

بعد میں سنتا ہے سب آہ و فغاں گنبدِ سبز

 

ایک لمحے کو تو خود حرفِ طلب چیخ اُٹھا

مَیں کہاں، دید کہاں اور کہاں گنبدِ سبز

 

آؤ مقصود مدینے کو چلیں درد نصیب

اب تو بس ایک ہی ہے جائے اماں گنبدِ سبز

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ