اردوئے معلیٰ

Search

تنظیمِ گلستاں کی خاطر کیوں اہلِ گلستاں لڑتے ہیں

ہے بات خلافِ ایماں یہ کیوں صاحبِ ایماں لڑتے ہیں

ہم کیوں نہ کبیدہ خاطر ہوں جب حاملِ قرآں لڑتے ہیں

فرمائے خدا ہی رحم ان پر آپس میں مسلماں لڑتے ہیں

 

جب ایک ہی اپنا قبلہ ہے جب ایک ہی چاہِ زمزم ہے

جب ایک ہی اپنا قرآں ہے جب ایک ہی اپنا پرچم ہے

جب ایک نبی کے آگے ہی سر اپنی اطاعت کا خم ہے

جب ایک ہے خالق ایک ہے دیں پھر کیوں یہ نزاعِ باہم ہے

 

جب ایک نظامِ برحق پر ایمان ہمارا کامل ہے

جب ختمِ رسل کے صدقہ میں دستورِ شریعت حاصل ہے

جب ایک سفر کے راہی ہیں جب ایک ہی اپنی منزل ہے

ایسے میں نگاہِ مسلم کیوں حیراں ہوں کہ سوئے باطل ہے

 

تزئینِ چمن کو ساماں سب ہم شان کے شایاں رکھتے ہیں

ہم سرو صنوبر نرگسِ شہلا سوسن و ریحاں رکھتے ہیں

ہم سبزۂ اخضر لالہ و نسریں سنبلِ پیچاں رکھتے ہیں

ہم قمری و طوطی بلبلِ شیدا مرغِ خوش الحاں رکھتے ہیں

 

کچھ حرص و ہوس کے بندے ہیں جو اور ارادہ رکھتے ہیں

کچھ اور ہی منزل ہے ان کی کچھ اور ہی جادہ رکھتے ہیں

وہ جامِ تعقل میں اپنے الحاد کا بادہ رکھتے ہیں

خود بہکے ہیں اور بہکائیں انہیں جو فطرتِ سادہ رکھتے ہیں

 

اربابِ ہوس وہ رہتے ہیں خسخانوں میں ایوانوں میں

مشروب مفرح پیتے ہیں کھاتے ہیں مرغن کھانوں میں

تفریح کریں وہ کلبوں میں جم خانوں میں میخانوں میں

دل دور حقیقت سے ان کے کھوئے ہوئے وہ افسانوں میں

 

آگاہ نہیں تم اے لوگوں ان کی شطرنجی چالوں سے

تم کھاتے آئے ان کے ہاتھوں ماتیں اکتیس سالوں سے

ہے بغض انہیں للّٰہی کچھ اسلام کے سب متوالوں سے

پہچانو لوگو دور رہو ابلیس کے ان دلالوں سے

 

ہے عرضِ نظرؔ احساسِ زیاں خدامِ شہِ لولاک کریں

جو دیں کے تقاضے ہیں ان کا للہ ذرا ادراک کریں

ظلمت کا گریباں تار کریں الحاد کا پردہ چاک کریں

فی الاصل بنا دیں پاکستاں یوں خاکِ وطن کو پاک کریں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ