توحید تری شان ہے اے صاحبِ لولاک

توحید تری شان ہے اے صاحبِ لولاک

بیشک یہی عرفان ہے اے صاحبِ لولاک

 

تو عشق کا عنوان ہے اے صاحبِ لولاک

کیا نور کا سامان ہے اے صاحبِ لولاک

 

دیکھوں تجھے اور تیرے سوا کچھ بھی نہ دیکھوں

ہر دم یہی ارمان ہے اے صاحبِ لولاک

 

کیونکر نہ وہ سمجھے تجھے یکتائے دو عالم

جو دل سے مسلمان ہے اے صاحبِ لولاک

 

باقی ہے ترے نور سے اور فانی ہے تجھ میں

جو جسم ہے جو جان ہے اے صاحبِ لولاک

 

کافر ہوں جو سمجھوں جدا تجھ کو خدا سے

میرا یہی ایمان ہے اے صاحبِ لولاک

 

عارف ہے جسے تیری حقیقت پہ نظر ہے

انساں وہی انسان ہے اے صاحبِ لولاک

 

تو خلد میں ہے اور ترا نور جہاں میں

الآن کما کان ہے اے صاحبِ لولاک

 

کیا غم تری امت کو قیامت کی بلا سے

تو آپ نگہبان ہے اے صاحبِ لولاک

 

تو رحمتِ علام ہے ترا شکر کہاں تک

احسان پر احسان ہے اے صاحبِ لولاک

 

تیرا رُخِ روشن ہے تجلی کی تجلی

قرآن کا قرآن ہے اے صاحبِ لولاک

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ